بلوچستان کی خوبصورتی

رقبے کے لحاظ سے بلوچستان سب سے بڑا صوبہ ہے جس کا پہاڑی سلسلہ گوادر سے لے کر حب چوکی تک آتا ہے بلوچستان کے پہاڑی سلسلوں میں لاتعداد معدنیات موجود ہیں معدنیات کے علاوہ بلوچستان کے خوبصورت علاقے جیسے کی زیارت قلات خضدار کنڈملیر گوادر جیونی اس صوبے کی خوبصورتی کا منہ بولتا ثبوت ہیں قلات میں موجود خان اف کلات کا محل پہاڑوں کے درمیان پایا جاتا ہے جہاں پر بلوچستان کے حکمران کا محل ہے جو کہ سیاحوں کے لئے ہر وقت کھلا رہتا ہے خان اف قلات کا کہنا ہے کہ کوئی بھی انسان جو کہ بلوچستان کی ہسٹری جاننا چاہتا ہے اور بلوچستان میں آنا چاہتا ہے اس کے لئے بلوچستان اور خان اف قلات کے محل کے دروازے ہمیشہ کھلے ہوئے ہیں اور گوادر میں سب سے گہرا پورٹ پایا جاتا ہے دنیا کا سب سے گہرا پورٹ گوادر شہر میں پایا جاتا ہے جو کہ بلوچستان کا ایک حصہ ہے زیارت کی مشہور آبشاریں خوبصورتی اور حیرت انگیز نظر سے بھرے ہوئے ہیں اور استار کے مختلف علاقے جیسے چاروں مچھی اور مولا چٹوک کے آبشار انتہائی خوبصورت اور سیاحوں کے لئے لطف اندوز ہونے کی بہترین مقامات ہیںاس کے علاوہ جیونی میں دنیا کا سب سے بہترین سن سیٹ اور سب سے بہترین سنرائز کا منظر دیکھنے کو ملتا ہے بلوچستان میں رہنے والی عوام آنے والے سیاحوں کو بڑے بہترین انداز میں خوش آمدید کہتے ہیں بلوچستان میں رہنے والی قوم بلوچ جو مہمان نوازی اور اصول پرستی میں مشہور ہیں اپنے علاقے کی خوبصورتی کا قدر کرتے ہوئے دکھائی دیتے ہیں مگر افسوس کی بات ہے کہ اتنے خوبصورت اور معدنیات سے بھرے صوبے میں رہتے ہوئے بھی وہ ان معدنیات سے محروم ہیں بلوچستان کے ہیں شہر سوئی میں سے گیس درآمد کی جاتی ہے جو کہ پورے پاکستان میں پہنچائی جاتی ہے لیکن اگر دیکھا جائے تو سوئی کے علاقے کے اپنے لوگ بلکہ پورے بلوچستان کے لوگ گیس سے محروم ہیں یا تو وہ گیس سیلنڈر سے کام چلاتے ہیں یا تو وہ لکڑیوں سے آگ جلا کر اپنے کھانے پینے کا بندوبست کرتے ہیں بلوچستان کی خوبصورتی کے بارے میں لوگوں کو اکثر بات کرتے ہوئے سنا ہے لیکن بلوچستان کے مسائل پر کوئی بات نہیں کرتا اتنے خوبصورت علاقے میں رہنے والے لوگ اپنے ہی صوبے کی معدنیات سے محروم ہیں۔کنڈ ملیر کے کر بات کی جائے تو کنڈ ملیر ایشیا کے سب سے بڑے نیشنل پارک ہنگول نیشنل پارک میں پایا جاتا ہے جہاں ایک بہترین ساحل سمندر کا منظر پایا جاتا ہے بہترین ساحل کے علاوہ ماں پری ھنگلاج مندر جو کہ ہندوازم کا بہت بڑا مندر بھی ہے جہاں ہر سال بڑی تعداد میں ہندو مذہب سے تعلق رکھنے والے لوگ آتے ہیں اور اپنے مذہبی فرائض انجام دیتے ہیں مندر اور ساحل سمندر کے علاوہ بلوچستان کے علاقے ہنگول نیشنل پارک میں دنیا کا سب سے بڑا مڈ ویلکینو پایا جاتا ہے ان ساری چیزوں کے علاوہ بلوچستان میں مشہور فاتح محمد بن قاسم کے سپاہیوں کی قبریں بھی پائی جاتی ہیں بلوچستان کی خوبصورتی کو لفظوں میں بتانا ناممکن سے کم نہیں بلوچستان میں اب بھی کچھ علاقے ایسے ہیں جنکو ڈسکور کرنے میں لوگ ناکام رہے ہیں بلوچستان کو لکھنے والوں نے ایک اف سی جنت کا نام دیا ہے ہماری دعا ہے کہ بلوچستان کی خوبصورتی یوں ہی برقرار رہے اور ہمارے دلوں میں بلوچستان کی خوبصورتی کی قدر ہمیشہ قائم دائم رہے

Leave a Reply