ناول حاصل کا تنقیدی جائزہ

ایک لمہ بس باقی سب کچھ گزر جاتا ہے وہ ایک لمحہ جو ٹھہر جاتا ہے نا وہی زندگی کو ایسا بدل کر رکھ دیتا ہے کہ کچھ سمجھ میں نہیں آتا یہ ساری تبدیلیاں کیسے ہوگئی ہم دیکھتے رہ جاتے ہیں اور وقت ہاتھ سے ریت کی طرح فھسنل جاتا ہے اور بس باقی رہ جاتا ہے تو صرف پچھتاوا اور پچھتاوا بہت تکلیف دیتا ہے پل پل لمحہ لمحہ انسان جیتا اور مرتا ہے یہ پچھتاوا وہی ہے جو وقت نکل جانے کے بعد ہر انسان کو ہوتا ہے اور ایسا ہی حدید کے ساتھ ہوا جی ہاں میں اسی مرکزی کردار جدید کی بات کر رہی ہوں جوحاصل ناول کا ایک مرکزی کردار ہے جو نفرت حقارت اور دھوکے کھاتے کھاتے مکمل طور پر ٹوٹ گیا ہے جب میں نے یہ ناول پڑھا تو اس کی تحریر پر میری آنکھیں نم ہوگئیں اور بہت مشکل لگا کہ میں اس ناول کو پورا پڑھ سکو گی؟ یہ میرے لیے بھی ایک سوال تھا

یہ ناول دو مرکزی کردار ثانیہ اور جدید پر مشتمل ہے جو مذہب کو ایک دھوکہ اور فریب سمجھتے ہیں

اور زندگی کے حالات سے تنگ آکر دوسرے مذاہب میں زندگی کا سکون تلاش پڑتے ہیں اور یہ بھول جاتے ہیں کہ جب اندرونی سکون نہ ہو تو دنیا کے کسی بھی مذہب میں زندگی کا سکون تلاش کرنا ایک دھوکا ہے اس ناول کے کردار دلچسپ ہیں  اور مصنفہ حمیرا احمدکا طریقہ اس ناول کی حقیقی جان ہے یہ کہانی

منحصر مذہب پر اور مصنفہ سے اس تحریر کے ذریعے ہمیں ہمارے اور اللہ کے درمیان تعلق کو یاد لاتی ہے کہ جب بھی ہم کسی مشکل میں ہوتے ہیں تو اللہ کے سامنے جھکتے ہیں اور اس کے آگے گڑگڑا کر دعا مانگتے ہیں اس ناول میں بھی اس طرح کے مختلف کردار ہیں مگر جو کردار مجھے پسند آیا وہ ثانیہ کیوں کے اسے یہ احساس ہوتا ہے کہ وہ اپنے مذہب کے بارے میں غلط ہے اور وہ ہی  حدیدکو بھی صحیح راستہ دکھاتی ہے اور اسے سمجھاتی ہیں کہ حالات کیسے بھی ہوں ہمیں ہر حال میں اللہ کا شکر گزار ہونا چاہیےتبہی ہم سکون حاصل کر سکتے ہیں اور اپنی زندگی کو اللہ کی دی ہوئی نعمت جان سکتے ہیں

اور میں اس کہانی سے بہت لطف اندوز ہوئیں اس کہانی میں زندگی کی ہر پہلو کو واضح طور پر دکھایا گیا ہیں کہ کس طرح انسان سکون امن اور خدا کی تلاش میں کن مراحل سے گزرتا ہیں۔

LACKING Of PARKS

A world of horror….a world of pollution….our homes , our streets and our offices are just exhausted due to the lack of oxygen and fresh air . It is just matter of time and the era we are going through the era of digital world .  This era has completely destroyed the idea and concept of refreshing your mind . And the main source which gives a human the total package of refreshment are called PARKS .  Unfortunately we are lacking these green lands full of grass and trees.

                                                                               Green spaces are a great benefit to our environment. They filter pollutants and dust from the air, they provide shade and lower temperatures in urban areas, and they even reduce erosion of soil into our waterways. These are just a few of the environmental benefits that green spaces provide.

                                                           Wishing Star Park|Shangahi

But here in our country we are completely losing these green spaces . We are so busy in our lives that we can’t think about other living beings around us such as animals . And not just that are kids are growing through mobiles and gadgets just because we don’t have a concept of spending time in parks making their minds fresh .

                                     Pocket parks are the solution to this common “lack-of-green-spaces” problem. Pocket parks, also known as vest-pocket parks or mini-parks, are just a smaller version of a regular park. All that is needed is a vacant lot between, or even behind, a couple of blocks of flats. As you can easily imagine, the less money, the more creativity!

A mini-park could include spaces for relaxing, a playground that you can visit with your children on a sunny morning, a small space for events, or even a small café where you can meet with your friends during your lunch break.

    Pocket-park

   ( paley park New York city)

 I think it is about time we reorganized the needs of our city and dealt with them, not with costly projects but with intelligence and creativity. Pocket parks are certainly a way to do that. They may seem a small and discreet intervention, but at the same time they may be a breath of fresh air for the concrete cities in which we live.