تعلیم :صرف ڈگری حاصل کرنے کا ذریعہ !!!

پہلے تعلیم حاصل کرنے کا مقصد اپنے علم میں اضافہ کرنا اور اس کو سمجھنے کی صلاحیتوں کو بڑھانا تھا۔ تا کہ اپنی زندگی کے مقصد سے آگاہی حاصل ہو۔ اور شعور بیدار ہو کہ ایک عام انسان اپنی زندگی کو کیسے بہتر سے بہتر بنا سکتا ہے۔ جس کے نتیجے میں کسی کو کسی سے پوچھنا نہیں پڑتا تھا کہ تم نے کس اسکول سے پڑھا ہے یا تمہاری کتنی تعلیم ہے۔ کیونکہ تعلیم حاصل کرنے والا شخص اپنے رہن سہن ، اپنے رکھ رکھاؤ، اپنی گفتگو، اپنی تہذیب اور اپنیعادت و اطوار سے شناخت کر لیا جاتا تھا اور لوگ بغیر کہے ہی سمجھ جاتے تھے کہ کون تعلیم یافتہ ہے اور کون جاہل۔مگر رفتہ رفتہ تعلیم ایک فیشن بن کر رہ گئی ہے۔ جس کا مقصد صرف یہ رہ گیا ہے کہ ماں باپ اس بات پر فخر کرسکیں کہ ان کے بچے مہنگے اسکول میں پڑھ رہے ہیں اور بچے اس بات پر فخر کریں کہ ان کے پاس فلاں بہترین اسکول کا سرٹیفیکٹ ہے،یہی سبب اخلاقی پستی کا ذریعہ بنتی جا رہی ہے۔جس کے نتیجے میں آج کل تعلیم کا رجحان پہلے سے کہیں زیادہ ہوجانے کے باوجود شناخت کرنا مشکل ہے کہ کون تعلیم یافتہ ہے اور کون جاہل۔کیونکہ لوگوں کے لہجے ایسے روکھے اور جذبات سے عاری ہوتے جا رہے ہیں کہ اس طرح گفتگو کرتے ہیں جیسے کسی پر احسان کررہے ہوں لہجہ ایسا ہوتا ہے کہ دوبارہ بات کرنے کی ہمت نہیں ہوتی۔ لباس پہننے کا شعور ناپید ہوتا جارہا ہے۔ فیشن کے نام پر جو لباس پہنا جاتا ہے وہ چاہے ان کی شخصیت کی مناسبت سے ہو یا نہ ہو زیب تن کرلیا جاتا ہے۔ صرف یہ سوچ کر کہ یہ لباس آج کل فیشن میں ہے اور مہنگی مارکیٹ سے خریدا گیا ہے، ان سے گفتگو کرنے کا سلیقہ سب کچھ ایک خواب وخیال بن کر رہ گیا ہے۔ ماں باپ کا ،استاد کا اوربڑوں کا احترام واکرام کم ہوتا جارہا ہے، کسی کی مدد کرنے کا وقت لوگوں کے پاس نہیں ہے۔ کسی بیمار کی عیادت کرنے کی ضرورت محسوس نہیں ہوتی۔ اپنوں کی موت پر بھی ایک رسم کے طور پر شرکت کی جاتی ہے۔ کسی کی خوشی پر خلوص اور پیار ومحبت سے شرکت کرنا لوگ بھول گئے ہیں۔ کیوں ؟کیونکہ ہم تعلیم حاصل کرنے کا اصل مقصد بھول گئے ہیں۔ اور تعلیم کو صرف ایک ڈگری حاصل کرنے کا ذریعہ سمجھ لیا ہے۔ جبکہ تعلیم ہی وہ واحد ذریعہ ہے جو انسان کو اس کی زندگی کا مقصد سمجھاتی ہے اوراحساس دلاتی ہے کہ یہ زندگی صرف اس کی ذات کی حد تک محدود نہیں ہے بلکہ وہ کسی ایک ایسی ہستی کا غلام ہے جس کے حکم کے مطابق زندگی گزارنا اس کا فرض ہے اور اسے کوئی ایسا کام نہیں کرنا جس کی وجہ سے اس کے مالک کی حکم عدولی یا نافرمانی ہوجائے۔تعلیم ہی وہ واحد ذریعہ ہے جس کی بدولت یہ شعور پیدا ہوتا ہے کہ انسان کا وجود کتنا کارآمد ہے اور اﷲ تعالیٰ نے اس کو اس دنیا کی نعمتوں سے لطف اندوز ہونے کا جو طریقہ بتایا ہے وہ اس کے لئے کتنا فائدہ مند ہے۔ اور وہ کس طرح اپنی زندگی کے راستے پر چلے کہ اﷲ تعالیٰ کی نافرمانی سے بچا رہے۔ اور اپنی زندگی کے خوبصورت رنگوں سے بھی محروم نہ رہے۔مگر افسوس ہم تعلیم اور اس کی افادیت کو بھول کرایک بے مقصد بے رنگ زندگی گزار رہے ہیں۔ اور جس کا نتیجہ کیا نکل رہا ہے کہ ہم نہ تو دنیا میں خوش اور مطمئن ہیں اور نہ مرنے کے بعد والی زندگی کے متعلق کچھ سوچ رہے ہیں کیوں کہ ہم اتنے مصروف ہیں کہ کچھ سوچنے کے لئے ہمارے پاس وقت نہیں ہے۔

اور یہ وقت کب آئے گا۔ کبھی سوچا ہے ؟ کبھی بھی نہیں۔ کیوں کہ جس تیزی سے ہم ایک دوسرے کو دھکیل کر آگے جانے کی کوشش کررہے ہیں اس کے نتیجہ میں ایک وقت ایسا تو آسکتا ہے جو ہمیں اکیلا کردے مگر واپس لوٹ کر جانے کا وقت نہیں بچے گا۔ اور اس وقت آپ خالی ہاتھ ہونگے اورایک پچھتاوہ ہوگا کہ ساری زندگی کی بھاگ دوڑ کے باوجود نہ تو اس دنیا میں خوش اور سکون واطمینان سے رہنے کا موقعہ ملا اور نہ اس نہ ختم ہونے والی زندگی کے لئے کچھ جمع کرسکے۔ افسوس!لہٰذا اس پچھتاوے اور افسوس کی اس گھڑی سے بچنا چاہتے ہیں تو تعلیم کی افادیت کو محسوس کریں اور تعلیم کو بطور ایک فیشن کے نہ اپنائیں بلکہ جو کچھ تعلیم سے حاصل کررہے ہیں یہ سوچ کر نہ حاصل کریں کہ امتحان دینا ہے یا ڈگری حاصل کرنی ہے یا یہ کہ جو کچھ ہم پڑھ رہے ہیں اس پر عمل کرنا ہمارے لئے ضروری نہیں ہے۔ تعلیم حاصل کریں تو اپنی شخصیت ، اپنے کردار، اپنی گفتگو ، اپنے لب و لہجہ ، اپنے لباس، اپنے رہن سہن اپنی قابلیت اور اپنے ہر عمل سے اس کا ثبوت دیں کہ آپ ایک تعلیم یافتہ اور تہذیب یافتہ قوم کے فرد ہیں۔ اور آپ کی زندگی کا چھوٹا سا سہی مگر ایک اہم مقصد ہے۔ کیونکہ مقصد یا کام چھوٹا ہوسکتا ہے مگراس مقصد کے پیچھے چھپا جذبہ چھوٹا یا معمولی نہیں ہوسکتا۔

Review on movie “punjab nahi jaoungi”

The film opens with Fawad (Humayun Saeed), the son of a wadera from Faisalabad, and Amal (Mehwish Hayat), a beautiful, urban girl used to the life and happenings of Karachi. Both have just graduated from college, but while Amal has a degree in Economics from London, Fawad has an MA in Political Science from a local institute which took him ten years to complete. The differences between the two lead characters immediately become clear.

Punjab Nahi Jaungi has the perfect opening, the perfect ending and although whatever is in between isn’t faultless but it is most certainly a really good effort by the team to provide the cinema-goers with wholesome entertainment. Punjab NahiJaungi’s real success lies in the fact that it can make the viewers laugh and cry at the same time! You know a film has managed to win the hearts of the viewers when they laugh at the jokes and there is dead silence in the cinema hall when the story takes an emotional turn.

The relationship between their two families hinges on their utmost respect for Beeboji, the head and decision maker for both. Amal happens to be the sole granddaughter of Beeboji, so her importance cannot be overstated. Fawad, adamant on finding himself a, ‘Heer,’ instantly falls for Amal when his mother sends him her photograph. But the mismatch between them is quite obvious, and Amal rejects the proposal right away.

Mehwish Hayat looks stunning throughout the film; the make-up artists, stylists, her designer and the director of photography have put in a lot of effort to make sure that she looks flawless all the way through. Her character (Amal) and acting also gives you Anmol vibes at times. Fawad Khagga and Shafique Ahmed’s (Ahmed Ali Butt) bromance and Ahmed Ali Butt’s dance moves are the highlight of the film. Sohail Ahmed is impressive as Mahtab Khagga, his comic timing is perfect. Urwa Hocane’s splendid performance was definitely the most pleasant surprise in the film.

Taking Amal to Punjab was easier than I thought it would be considering the name of the film. Urwa Hocane as Durdaana, Fawad’s cousin, puts up an impressive dance number with Ahmad Ali Butt on the wedding of Amal and Fawad. The film is light-hearted up to this point and the main characters – Amal with her strong sense of self, and Fawad with his earnest portrayal of a simple wadera, do absolute justice to their roles.

This film also has some memorable songs to its credit and for me 24/7 Lak Hilna and Ranjha were clear winners because they were a complete package; beautifully composed, written, sung and choreographed. Although 24/7 Lak Hilna looked like an item number but it was definitely not one. It was also the only song in which Humayun Saeed and Mehwish Hayatactually danced.

In last I just want to sum up my review by sying one word amazing about this movie. Best movie I have ever seen so far, I recommend everyone to watch this beautiful movie once and to see beautiful side of our beautiful Pakistan.

TOPIC :- ONE WHEELING OF BIKE
One wheeling is riding a motor bike using a single wheel which can be life threatening. Bike riders, who resort to one Wheeling, often perform dangerous stunts like lying flat, standing on motor bikes and driving with backs facing the handle. Recent years have seen an alarming increase in this dangerous trend among the youth in Pakistan. Most of these bikes are run without silencer and the bikers make sure to give their bike a complete makeover so that they have dazzling headlights, awkward designs without mudguards and fuel tanks adorned in different colors. Youngsters, especially on Independence Day, Eid and New Year Eve do wheelies on their bike. One wheeling is an unusual sport of developing world. In the USA, UK, Japan and other western countries, one wheeling is considered a sport in the form of uni cycling, bicycling and tri-cycling and motor biking.Daring stunts can be witnessed on sports channels where joy riders take part in international events and enjoy the speed and stunt they perform in a healthy and relatively safer environment. Among the many causes, fueling this dangerous trend is the practice of people betting on their favourite item. In Pakistan, people face lack of recreational activities. We lacked state-owned parks and opportunities for healthy sports. Then militancy and terrorism reduce any opportunity for healthy entertainment in the country. In these circumstances, people resort to dangerous activities like one-wheeling as a form of entertainment. The government should set up safe racetracks for riders and depute special trainers where riders can take part in biking activities in a healthy and safe environment.
SYED FARAZ AHMED

LACKING Of PARKS

A world of horror….a world of pollution….our homes , our streets and our offices are just exhausted due to the lack of oxygen and fresh air . It is just matter of time and the era we are going through the era of digital world .  This era has completely destroyed the idea and concept of refreshing your mind . And the main source which gives a human the total package of refreshment are called PARKS .  Unfortunately we are lacking these green lands full of grass and trees.

                                                                               Green spaces are a great benefit to our environment. They filter pollutants and dust from the air, they provide shade and lower temperatures in urban areas, and they even reduce erosion of soil into our waterways. These are just a few of the environmental benefits that green spaces provide.

                                                           Wishing Star Park|Shangahi

But here in our country we are completely losing these green spaces . We are so busy in our lives that we can’t think about other living beings around us such as animals . And not just that are kids are growing through mobiles and gadgets just because we don’t have a concept of spending time in parks making their minds fresh .

                                     Pocket parks are the solution to this common “lack-of-green-spaces” problem. Pocket parks, also known as vest-pocket parks or mini-parks, are just a smaller version of a regular park. All that is needed is a vacant lot between, or even behind, a couple of blocks of flats. As you can easily imagine, the less money, the more creativity!

A mini-park could include spaces for relaxing, a playground that you can visit with your children on a sunny morning, a small space for events, or even a small café where you can meet with your friends during your lunch break.

    Pocket-park

   ( paley park New York city)

 I think it is about time we reorganized the needs of our city and dealt with them, not with costly projects but with intelligence and creativity. Pocket parks are certainly a way to do that. They may seem a small and discreet intervention, but at the same time they may be a breath of fresh air for the concrete cities in which we live.

کرپشن کاناسور

کرپشن ایک ایسا مرض ہے جو کینسر سے بھی زیادہ خطرناک ہے کیوں کہ جس مریض کو کینسر ہوجائے وہ مریض آہستہ آہستہ موت کے منہ میں جاتا ہے جبکہ اگر کسی معاشرے میں کرپشن کا راج قائم ہوجائے اس معاشرے میں غربت اور بے روزگاری تیزی سے پھیلتی ہے اور وہ معاشرہ تباہ و برباد ہوجاتاہے۔

کرپشن تخت پر بیٹھےحکمرانوں کی گود سےجنم لیتی ہےجو آگے چل کر ریاست کے نظم حکمرانی اور معاشرتی ڈھانچے کو تہہ وبالا کرنے کا باعث بنتی ہے۔ کرپشن مختلف شکلوں اور انداز سے معاشرے کو چاٹتی اور برباد کرتی ہے۔ مالیاتی بدعنوانیاں اس کا صرف ایک رخ ہیں۔ اس کے سوا بھی کئی شکلیں ہیں، یعنی میرٹ سے انحراف، اقربا پروری کی حوصلہ افزائی کا باعث بنتا ہے اور سماجی انصاف کا قتل کرتا ہے۔

اخلاقی کرپشن سماجی بے راہروی کوجنم دیتی ہے جس کے نتیجے میں سماج بے سمت و بے مہار ہوجاتا ہے جب کہ مالیاتی کرپشن ان سب سے زیادہ خطرناک بدعنوانی ہے، جو ریاست کی معیشت، انتظامی و سماجی ڈھانچے سبھی کو اندر سے کھوکھلا کر کے رکھ دیتی ہے۔اس لیے محب وطن متوشش شہریوں کی یہ اولین ذمے داری ہوتی ہے کہ وہ کرپشن کے عفریت سے ملک کو نجات دلانے میں اپنا بھرپور کردار ادا کریں۔

بابائے قوم محمد علی جناح نے دستور ساز اسمبلی میں اپنے پہلے خطاب میں قانون سازوں کو جہاں نظم حکمرانی کے اہداف اور اصول و ضوابط سمجھانے کی کوشش کی، وہیں کرپشن اور بدعنوانیوں کی خرابیوں اور اس کے منفی اثرات کے مختلف پہلوؤں کے بارے میں مکمل آگہی دیتے ہوئے کہاتھاکہ کرپشن اور رشوت ایک لعنت ہے۔ مگر جس طرح ہماری حکمران اشرافیہ نے ان کی تقریر کے دیگر مندرجات کو فراموش کردیا، وہیں کرپشن کے بارے میں ان کی ہدایات کو بھی بھلا دیا بلکہ ان کی آنکھ بند ہوتے ہی ہر وہ کام کیا جس کی انھوں نے مخالفت کی تھی۔ یعنی قرارداد مقاصد کے ذریعہ ریاست کے منطقی جواز کو تھیوکریسی کا لبادہ پہنا دیا۔ بدانتظامی اور اقرباپروری کے ذریعہ کرپشن کو نظم حکمرانی کا جزو لاینفک بنادیا۔جس سے جان چھڑانا آج ایک مشکل ترین مرحلہ بن گیا ہے۔

دنیا بھر کے ملکوں میں کرپشن پر نظر رکھنے والے ادارے ٹرانسپرنسی انٹرنیشنل کے سروے کے مطابق پاکستان میں گذشتہ چند سالوں میں کرپشن میں سوا چار سو فیصد اضافہ ہوا ہے۔

رپورٹ کے مطابق پاکستان کے جن اداروں کو بدعنوانی کی فہرست میں پہلا درجہ دیا گیا ہے ان میں محکمہ پولیس سرفہرست ہے جبکہ اراضی ، تعلیم ،صحت ، لوکل گورنمنٹ اور ٹیکس کے محکموں میں کرپشن کی شرح میں کمی جبکہ عدلیہ میں اضافہ ریکارڈ کیا گیا ہے۔ادھرپاکستان کی معیشت کو تباہی کے دھانے پر پہنچانے والا توانائی کا شعبہ گزشتہ سال کی طرح اس سال بھی دوسرے نمبر پر ہے۔

ہمارے معاشرے کا ہر دوسرا شخص اس بیماری میں مبتلا ہے۔ سیاسی رہنما کرپشن کے خلاف تقریریں تو کرتے ہیں لیکن کرپشن کی وجوہات پر بات نہیں کرتے اور نا ہی اس کے خاتمے کے لئے کردار ادا کرتے ہیں۔ ہر سیاسی جماعت میں کرپٹ لوگ موجود ہیں اور اس حقیقت سے کوئی انکار نہیں کرسکتا۔ اکثر کچھ حلقوں کی جانب سے یہ تاثر دینے کی کوشش کی جاتی ہے کہ کرپشن کے ذمہ دار صرف اور صرف سیاستدان ہیں۔ یہ بات درست ہے کہ چند سیاسی رہنماؤں نے کرپشن کے ریکارڈ قائم کررکھے ہیں مگر صرف سیاستدانوں پر ملبہ ڈال کر ہم اس مرض سے چھٹکارا حاصل نہیں کر سکتے۔

اب تو ہر شعبے اور ادارے میں کرپشن اپنے عروج پر پہنچ گئی ہے۔ ہر صحافی کرپٹ نہیں مگر اس حقیقت کو جھٹلایا نہیں جاسکتا کہ صحافی بھی کرپٹ ہوتے ہیں، جو اپنے ذاتی مفادات کے لئے کرپٹ سیاسی رہنماؤں کو سپورٹ کرتے ہیں، ان کی طرف داری کرتے ہیں اور کچھ اینکرپرسن تو یوں گفتگو کرتے ہیں جیسے وہ کسی سیاسی جماعت کے ترجمان ہوں اس کے پیچھے بھی ان کے مفادات ہوتے ہیں۔

رشوت لینے والا اور دینے والا دونوں ہی برابر کے ذمہ دار ہیں۔ جب ہم رشوت دینا چھوڑ دیں گے اور اپنے کاموں کے لئے قانونی طریقہ کار اختیار کریں گے تو بڑی حد تک کرپشن میں کمی ممکن ہے اور رہا سوال کرپٹ سیاسی رہنماؤں کا تو آئندہ آنے والے عام انتخابات میں اپنے ووٹ کی طاقت سے ان تمام کرپٹ سیاسی رہنماؤں کو رد کریں اور ملک و قوم کے لئے ایماندار اور بہتر نمائندوں کا انتخاب کریں۔

انسان اور کتابیں

کہتے ہیں کتابیں انسان کی بہترین دوست ہوتی ہیں  ۔ لیکن آج کے انسان نے شائد اس دوست سے قطع تعلقی کرلی ہے۔آج کے تکنیکی دور میں زندگی اتنی تیزی سے گزر رہی ہےکہ ہم اندازہ بھی نہیں کر سکتے۔


آج کے لوگوں کا انحصار مصنوعی آلات پر ہے جس کی وجہ سے آج کے لوگ سستی کا شکار ہو گۓ ہیں،اور ان کا تخلیقی عمل بھی ایک طرح سے سست ہو چکا ہے۔انہی ألات کی وجہ سے آج کے لوگ کتابوں سے بھی دور ہو چکے ہیں اور ان کا سارا وقت انٹرنیٹ پر وقت صَرف کرتے ہوۓ گزرتا ہے۔ 


اگر کچھ سال پہلے کی بات کی جاۓ تو پہلے کےلوگوں کو ان مصنوعی آلات کی بہت زیادہ عادت نہیں تھی اور وہ اپنا فارغ وقت اچھی اور معیاری کتابیں پڑھ کر گزارتے تھے، جس کی وجہ سے ان کا زہن اچھا کام کرتا تھا اور وہ لوگ کتابوں کی اہمیت کو اچھے سے جانتے تھے ان کی نسبت اگر آج کے نوجوان کو دیکھا جاۓ تو یہ کتابوں سے دور بھاگتے ہیں اور ان کا کتابیں پڑھنے کا شوق ایک طرح سے ختم ہو چکا ہے۔ اج کے دور میں کتابوں کو وہ اہمیت نہیں دی جاتی جو کہ کتابوں کو دینی چاہیے۔

ملک کی ترقی میں کتابیں بہت اہم کردار کرتی ہے۔ ان کی وجہ سے ہی ہم لوگوں میں شعور اجاگر کر سکتے ہیں اور اسی کی وجہ سے لوگ ملک کی ترقی میں اہم کردار بھی ادا کرسکتے ہیں۔ 
ہمیں چاہیۓ کہ ہم ایسے پروگرام منعقد کروایں جن میں کتابوں کی اہمیت کو اجاگر کیا جاۓ ایسے بک فیسٹول کرواۓ جائیں جن میں معیاری کتابوں کے بارے میں بتایا جاۓ ہمیں اپنا وقت مقرر کرنا چاہیے, جس میں ہم کتابوں کا مطالعہ کریں۔ جس سے ہماری زہنی نشونما بہتر ہو سکے۔کتابیں تخیلات میں پرواز کا وسیلہ ہے۔

ایمسٹ ہیمنگوے کا قول ہے “کتابوں سے ذیادہ وفادار کوئ دوست نہیں”۔

بٹ کوئن کیا ہے ؟

آپ نے بٹ کوئن کے بارے میں تو سنا ہوگا۔ یہ ایک الکٹرانک  کرنسی  ہے جس کا وجود صرف اور صرف  انٹرنیٹ پر موجود ہوتا ہے۔

اس کرنسی کو لیکر لوگو کے  ذہنوں میں  بہت سی باتیں ہیں۔  کچھ لوگ اسے فراڈ  کیتے ہیں  اور کچھ لوگ اسے شیطانی چال  سمجتے ہیں۔ پر کیا واقعی یہ سب سچ  ہے یا صرف منگڑت    قصے کہا نیاں ؟ اس سوال کے جواب کے  لیے ہمیں  بٹ کوئن کو باریکی سے جانچنا ہوگا۔

تعاریف

بٹ کوئن فزیکلی وجود نہیں رکھتی بلکہ یہ انٹرنیٹ پر آپ کے آن لائن والٹ میں موجود ہو تی ہے- اور یہیں سے آپ اس کو بیچ اور خرید سکتے ہیں-

 تاریخ

بٹ کوئن کی تاریخ کو اگر دیکھا         جائے تو سب سے پہلے اس کا تصور 1982 میں “ڈیوڈ چئوم” نامی ایک کمپیوٹر سائنٹسٹ نے پیش کیا ۔ اس ڈیوڈ چئوم  نے “بلئنڈ   سگنیچر   فار    انٹراسبل پئےمنٹ”کے نام سے ایک ریسرچ پیپر بھی شائع کیا جس میں اس نے بٹ کوئن کی تین خصوصیات   لکھی  جو کچھ یوں تھیں۔

1۔  پیسہ ٹرانسفر   کرتے ہوئے تیسرے شخص کو خبر نہیں ہوگی۔

2۔   پیسہ  ادا کرنے کا ثبوت بھی  موجود ہوگا اور جس کو ادا کیا جا رہا ہے  اس کی شناخت بھی معلوم ہوسکے گی۔

3-  چوری شدہ پیسہ استعمال ہونے سے روکا جا سکے گا۔

اس تصور کو حقیقت کی شکل دینے کے لیے ڈیوڈ چئوم نے  “ڈیگی کیش ” کے نام سے ایک کمپنی بھی بنائی جوکامیاب نہ ہوسکی اور   90 کی دہای  کے آخر میں بند کردی گئی۔ 

سلسلہ یوں ہی چلا اور مختلف لوگو نے مختلف ناموں سے اس تصور کو سچ کرنے کی کوشش کی مگر کامیاب نہ ہوسکے ۔

سن 2008 میں “ساتوشی ناکاموٹو” ایک  ماہر کمپیوٹر   نے اس تصور کو سچ کر دکھایا  اور یہا ں سے بٹ کوئن کی ایجاد ہوئی۔

حاصل کرنے کے طریقے

   بٹ کوائن حاصل کرنے کے دو طریقے ہیں-ایک تو یہ کہ آپ اپنی کوئی سروس یا پروڈکٹ انٹرنیٹ پر بیچیں اور بدلے میں خریدار سے بٹ کوائن حاصل کریں-

دوسرا طریقہ بٹ کوائن مائیننگ کے نام سے جانا جاتا ہے-بٹ کوائن مائننگ کے لئیے بہت ہی زیادہ طاقت ور کمپیوٹر کو ایک ساتھ جوڑ کر ریاضی کے بہت بڑے بڑے اکیوشنز سولو کرائی جا تی ہیں جس کے بدلے میں کمپیوٹر کے مالک کو انعام کے طور پر کچھ بٹ کوائن مل جاتے ہیں-یہ طریقہ شروع میں بہت آسان ہوتا ہے لیکن وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ یہ بہت مشکل ہو جاتا ہے-

اور چند دن بعد آپ پر ایسا وقت آتا ہے کہ آپ کا خرچہ حاصل ہونے والے بٹ کوائن سے زیادہ ہو جاتا ہے-

قیمت

بٹ کوئن  کی  قیمت کے اتار چڑہاو کا معملہ عام پیسے سے مختلف ہے۔ دراصل بٹ کوئن کی طرف لوگو کا  رجحان فیصلہ کرتا  ہے کے اس کی قیمت کیا ہوگی۔ یعنی جتنے لوگ اس کو خریدیں گے اتنی ہی اس کی قیمت میں اضافہ ہوگا۔  نومبر 2018 کے اعدادوشمار کے مطابق  ایک بٹ کوئن کی قیمت   چار ہزار دو سو اٹھتر “4278”ڈالر ہے جو پاکستانی کرنسی کے حساب سے  پانچ لاکھ  چوہتر ہزار دو سو پچپن   “574255”روپے بنتی ہے۔  

فوائد

چلیے ذرہ اس کرپٹو کرنسی کے فوائد پر نظر ڈالتے ہیں۔

۱۔  پئمنٹ کے لیے کہیں جانا آنا    نہیں پڑے گا۔

۲۔  سرحد پار پیسہ بھجنے کے لیے رقم تبدیل نہیں کروانی پڑے گی۔

۳۔    رقم بھجنے اور وصول کرنے والوں کے درمیان کوئی تیسرا حائل نہیں ہوگا۔

۴۔ آپ کا پیسہ محفوظ رہے گا۔

۵۔  پیسہ بھجنے پر نا ہونے کے برابر ٹیکس لاگو ہوگا۔

۶۔  نوٹ،سکے ،کریڈٹاور ڈیبٹ کارڈز جیسی چیزوں کو سنبھالنا نہیں پڑے گا۔

۷۔ جس کی پہنچ  میں انٹرنیٹ اس کی پہنچ مین کرپٹو کرنسی۔

۸۔ بینک یاکسی بھی فنڈز ٹرانسفر کرنے والے ادارے کو اپنی ذاتی معلومات دینی پڑتی ہے، جبکہ بٹ کوئن کے  ساتھ ایسا نہیں ہوگا۔

نقصانات

جہان بٹ کوئن کے بہت فائدے ہیں وہیں اس کے نقصانات بھی ہیں ۔ تو چلیے کچھ ان کا بھی تزکرہ کرلیتے ہیں۔

۱۔  بٹ کوئن  کو کمانے سے لیکر جمع کرنے اور استعمال  کرنے تک ایک مشکل کڑی ہے جسے سمجھنے کے لیے محنت کے ساتھ ساتھ تعلیمی قابلیت ، موبائل    اور انٹرنیٹ کا استعمال آنا بھی  زروری ہے۔ یعنی جس  ادارے میں ملازمین پڑےلکھے نہیں اس ادارے کے لیے بٹ کوئن نہیں۔  

۲۔  انٹرنیٹ موجود نہیں تو  بٹ کوئن نہیں۔

۳۔  اب تک بٹ کوئن استعمال کرنے والے کاروباری حضرات اور بینکس بہت کم تعداد میں ہیں، جس کی وجہ سے بٹ کوئن   استعمال کرنے والوں کے لیے دائرہ کاربہت چھوٹا ہے۔

۴۔   بٹ کوئن کی قیمت یکسا نہیں رہتی ۔ حالات کے حساب سے یہ کبھی بھی اپنی  قدر کھو سکتا ہے اور پہلے سے زیادہ حاصل بھی کر سکتا ہے۔

کچھ مزید حقائق

۱۔  بٹ کوئن کی پہلی قیمت مارچ 2010 میں لگی تھی  جو صرف 0۰03 ڈالر تھی اور پاکستانی  لحاظ یہ قیمت   4روپے بنتی ہے۔

۲ ۔بٹ کوئن سے سب سے پہلے جو چیز خریدی گئی وہ پیزا کے  دو ڈبےتھے  جن کے  لیے  خریدار نے 10،000 بٹ کوئن دے ڈالے۔

۳۔   بٹ کوئن  ایک ایسی کرنسی ہے جو ہر ملک میں کام کرتی ہے ۔

۴۔   ایک عام گھر ایک ہفتے میں جتنی بجلی استعمال کرتا ہے ، اتنی بجلی ایک بٹ کوئن ٹرانسفر کرنے میں لگتی ہے۔

۵۔ بٹ کوئن  ایک جگہ سے دوسری جگہ   ٹرانسفر کرنے کے دوران کوئی بینک اور حکومتی ادارہ درمیان میں حاءل نہیں ہوتا۔

۶۔  اسٹیٹ بینک آف پاکستان نے   پاکستان میں بٹ کوئن    پر پابندی  عائد کی  ہوئی  ہے ۔      

حرف آخر

   اس بات میں کوئی شک نہیں کے بٹ کوئن  انسان کی  بہت سی مشکلات کو حل کرنے  او ر وقت بچانے   میں نہایت مددگارگر ثابت ہوگا۔  اس کا ایک فائدا ہے بھی ہو گا کہ  جیب مین نوٹوں اور سکوں کی چھن چھن سے بھی جان  چھوٹ جائے گی۔  لیکن  اگر اس کرنسی کا صحیح استعمال نہ کیا گیا تو  مستقبل میں مسائل کا سامنہ بھی کرنا پڑ سکتا ہے ۔ امید ہے کی یہ ٹیکنالوجی آنے والے وقتوں میں    انسان کے لیے کار گر  ہو۔

To China with Love

         A relationship between 2 countries is not just about doing business, giving loans to each other or the meeting of politicians to each other in order to work on new planes. But, it is the name of an endless friendship in which language, styles and even culture has to be shared with each other. Pakistan and China has this type of relationship a long time ago. Both countries have clear perception to each other as well as the love the nations.

         For a common man of Pakistan the relationship of Pakistan and china is not just a hope for better future in diplomacy but a courage to fight the challenges through the time. Now people of Pakistan are working with them in different organizations as well as chines people have their business in domestic level in Pakistan and people of Pakistan use to shop from them. Only this relationship is not just interesting but its history has a uniqueness in it.

         The relationship starts from 1951 when during the civil war Communist groups captured on China and the Present Government had to transfer itself to Taiwan. Pakistan was the first country who accepted the government of China and discard the relationship with Taiwan. In 1956 Chinese premier Zhou Enlai and Prime Minister of Pakistan Hussain Shaheed Sher-wardi signed the “Treaty of Friendship” between China and Pakistan. Now with the flow of time both countries are progressing together.

         “In Art Economy is Always Beauty, Henry James”. Yes! China is playing a great roll in the development of economic system of Pakistan. Some major projects are the following.

  • The 720 megawatt Karot hydro-project: – This projects was started in December 2016 and will be completed in December 2021. This Project is about 720 Megawatt Korat Hydropower and located in Kashmir.
  • Direct current transmission line from Lahore to Matiari: – This project will help Pakistan to cover the shortage of Electricity in the country. It is the investment of $2 billion and will be completed in 2024.
  • Karachi Circular Railway (KCR): – It is the project to upgrade the costal of Karachi and will be completed in 2020.
  • China Pakistan Economic Corridor (CPEC): – It is the plan to build a port at Gawadar in order to connect Gwadar Port of Pakistan to China’s northwestern region of Xinjiang, It is the investment of $46 billion.

So, it is true that the love of Pakistan with China is ‘higher than the mountains, deeper than the oceans, sweeter than honey and stronger than steel’.

Unemployment in Pakistan

From the Dark Age before, it is true that unemployment is a sensitive and most repeatedly
faced issue of Pakistan. Most of the natives are suffering from this depression referred to as
‘unemployment’. Many Pakistani graduates are talented, intelligent, and skilled yet don’t get an
opportunity to work. Currently, more than 3 million Pakistanis are unemployed. There are many
students who move abroad for work after getting degrees. Pakistan is blessed enough to have
valuable human capital but unfortunately due to lack of opportunities most of them leave the
country.


Causes of Unemployment
There are countless reasons behind the menace of unemployment in Pakistan. Let’s highlight some of
the significant ones here:

Over Population
Uncontrolled and ever increasing population of Pakistan is certainly challenging. According to the
statistics, the population of Pakistan is increasing by 2.2%. The factors responsible for overpopulation
are illiteracy, early marriages, desires for sons, lack of awareness etc.

Terrorism & Political Instability
Unemployment in Pakistan aggravated due to the problem of terrorism and political instability. This has
resulted in destruction of institutions, and affected the peace and economic growth of various regions.
This is the key reason that international investors refrained from investing their capital in Pakistan.
Many factories has closed owing to suicide explosion, where lots of people work to earn money for their
lives, because of explosion so many people unemployed, on the other hand, production of different
things went down and closing of factories caused to rise more unemployment.
Energy Crisis
Pakistan is blessed with plenty of natural resources and is an atomic power, still faces energy crisis.
There are many sources of producing energy in Pakistan but due to lack of proper planning, efforts, and
corruption, Pakistan is having problem of energy crisis. The government of Pakistan is unable to provide
electricity to residential areas in Pakistan and similarly, the industrial sector is severely affected.
Pakistan Unemployment Rate
Unemployment Rate in Pakistan declined to 5.90 percent in the fourth quarter of 2015 from 6 percent in
the fourth quarter of 2014. It averaged 5.46 percent from 1985 until 2015. In Pakistan, the
unemployment rate measures the number of people actively looking for a job as a percentage of the
labor force.
Growth of Population
One of the major and the biggest problems of unemployment in Pakistan is the growth of population.
According to the survey, the population of Pakistan is increasing with the rate of 2.2%. The reason
behind the massive population is illiteracy, early marriages and also lack of awareness. This problem is
very common, especially in rural areas where there are more uneducated people. Government or any
other sector cannot provide those jobs.
Poor Education System
Everyone knows that the education system in Pakistan is very poor and this is the major reason behind
the unemployment problem in Pakistan. We can see that government has failed to take necessary steps
to provide the best education system, which cause imbalance in the education system. Many brilliant
students have left the study due to too many fees. Moreover, many institutions are just selling degrees
to the people, which results in the lack of experience and skills in them.
Higher Retirement Age
The retirement age in Pakistan is 60 years, which is very high. Government is directly responsible for the
unemployment problem in Pakistan. Due to this factor, the people with less age are in wait of jobs and
their higher education is making them exasperated because of no job.

Solution of Unemployment Problem in Pakistan
There are many solutions to decrease the unemployment problem in Pakistan like the improvement in
the education system. There should be proper planning by the government of Pakistan. Every sector
should be developed and job should be given on the merit basis only. Moreover, family planning centers
should be opened everywhere to educate the people. In the end, one must say that this unemployment
problem should not be ignored

معاشرےمیں عورتوں کو پیش مسائل

عورت انسانی معاشرے کا ایک حصہ ہے،صرف مرد یا عورت سےمعاشرہ تشکیل نہیں ہوسکتا اس طرح یہ ایک حقیقت ہے کہ معاشرے میں عورت کے مقام اور حقوق کو یا اس کی حیثیت کو مجروح کرکے اس کی اہمیت کو نظرانداز نہیں کرسکتے۔

معاشرے میں عورت کے مقام اور حقوق کو یا اس کی حیثیت کو مجروح کرکے اس کی اہمیت کو نظرانداز نہیں کرسکتے۔

عورت ہر جگہ ایک مظلوم صنف کی حیثیت رکھتی ہے اور مردوں کے ظلم وجبر کا شکار بنی ہوئی ہے، عورت کے حقوق اور اس کا مقام بعض اعتبارسے جانوروں سے مختلف نہیں، دور جاہلیت میں عورتیں انسان اور حیوانات کے درمیان ایک مخلوق سمجھی جاتی تھیں، جس کا مقصد نسل انسان کو بڑھانا اور مرد کی خدمت کرنا تھا، اسی وجہ سے لڑکیوں کی پیدائش کو باعث شرم تصور کیا جاتا اور بعض علاقوں میں تو اس کو پیدا ہوتے ہی مار بھی دیا جاتاتھا مگر اسلام نے عورت کومعاشرے میں ایک بلند اور محفوظ مقام دیاہےاور عورتوں کو ان کے حقوق دیئےگئے تاکہ ان کی خواہشات کا گلا نہ گھونٹاجائے۔

عورت گھر کی زینت ہوتی ہے اور زندگی کے ہر معاملات میں عورت کی رائے پوچھنا لازمی ہے،سوچنے والی بات یہ ہے کہ جب ہمارامذہب اسلام عورتوں کو ان کے مکمل حقوق دیتا ہے توہم اورآپ اس سے اختلاف کرنے والے کون ہوتے ہیں؟اس کے باوجود ٹیلی ویژن اور اخباروں میں عورتوں کے ساتھ کئے جانے والے غیر اخلاقی واقعات کی خبریں منظرعام پرآتی رہتی ہیں۔

ہم روز مرہ کی زندگی میں ایسے کئی واقعات پڑھتے ہیں کہ کسی عورت کو جائیداد سے بے دخل کردیا جاتاہے، کسی عورت کو اس کے بچے سے علحیدگی پر مجبور کیا جاتاہےاور کہیں تو کسی عورت کو پیسوں کی خاطر بیچ بھی دیا جاتاہے۔اس کا مطلب تو یہی ہوا کہ نہ کل عورت کے پاس حقوق تھے اور نہ ہی آج ہیں۔اس سے اندازہ لگائیں تو کیا ہمارے معاشرے میں عورت کو اس کےحقوق دیے جارہےہیں؟۔

پاکستان میں عورتوں کو بہت مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہاہےجن میں تعلیم سے محروم رکھنا، نوکری کرنے کو برا سمجھا جانابھی ہے،جبکہ ہمارے ملک میں عورتوں سے ساتھ پیش آنے والے مسائل میں ایک سنگین مسئلہ یہ بھی ہے کہ ان کی چھوٹی عمر میں شادی کرادی جاتی ہےجو انکےحقوق پر سب سے بڑا ڈاکا ہے، اس کے علاوہ عورتوں کی ملازمت بھی ایک سوالہ نشان بنی ہوئی ہے۔
اس ترقی یافتہ دورے میں بھی معاشرے میں عورت کے گھر سے باہر ملازمت کرنے کو اچھا نہیں سمجھا جاتا،اس سلسلے میں مختلف طریقوں سے روکاوٹیں پیدا کی جاتی ہیں،جس کی وجہ سے عورت کومشکلات کا سامنا کرناپڑجاتاہے حلانکہ معاشرے کا ہر فرد اس بات سے بخوبی واقف ہے کہ عورت زندگی کی گاڑی کا پہیہ ہے لیکن اپنی جھوٹی شان وشوکت،فرسودہ رسم ورواج اور انا کی تسکین کے کیلئے عورت کو ذہنی وجسمانی طور پر تکلیف دی جاتی ہے، جس معاشرے میں عورت کو مردوں کے شانہ بشانہ کام کرنے کا موقع دیا گیا تو آج وہ معاشرہ ترقی کی راہ پر گامزن ہے۔جبکہ ایسے ممالک دینا کے ترقی یافتہ ممالک میں تصور کیے جاتےہیں مگر ہمارے معاشرےمیں حالات اس کے برعکس ہیں یہاں کبھی عورت پر آوازیں کسی جاتی ہیں تو کبھی نظروں سے ذہنی پریشانی دی جاتی ہےلیکن پھر بھی عورت صبروتحمل سے کام لیتی ہے اور معاشرے کے ظلم وستم بھی سہتی ہے۔